Post With Image

حلف نہ اٹھانے کے باوجودکلثوم نوازرکن قومی اسمبلی رہ سکتی ہیں،الیکشن کمیشن


الیکشن کمیشن نے کلثوم نوازکی رکنیت معطلی سے متعلق پی ٹی آئی کے خط کا جواب دے دیا،الیکشن کمیشن نے جواب میں کہا ہے کہ حلف نہ اٹھانے کے باوجودکلثوم نوازرکن قومی اسمبلی رہ سکتی ہیں،آرٹیکل 65کے تحت ایوان میں بیٹھنے یا ووٹ دینے کیلئے حلف ضروری ہے،آئین وقانون میں منتخب ہونے پرحلف اٹھانے کی کوئی ڈیڈلائن نہیں۔ واضح رہے کہ کلثوم نواز این اے 120سے رکن قومی اسمبلی منتخب ہوئی ہیں اور علالت کے باعث لندن میں زیر علاج ہیں جس کی وجہ وہ حلف نہیں اٹھا سکیں،پی ٹی آئی نے حلف کے بغیرکلثوم نوازکی اسمبلی رکنیت پرسوال اٹھایا تھا۔ واضح رہے کہ بیگم کلثوم نواز کے قومی اسمبلی کی رکنیت کا حلف نہ اٹھانے کے معاملے پر تحریک انصاف نے الیکشن کمیشن کو خط لکھ دیا ہے۔ منتخب رکن اسمبلی کی جانب سے حلف نہ اٹھانے سے متعلق آئینی و قانونی توجیہات مانگ لیں۔ سابق وزیر اعظم نواز شریف کی اہلیہ کلثوم نواز 7 ستمبر کو قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 120 سے رکن قومی اسمبلی منتخب ہوئی تھیں تاہم علالت کے باعث لندن میں زیر علاج ہونے کی وجہ سے انہوں نے تاحال قومی اسمبلی کی رکنیت کا حلف نہیں اٹھایا۔ تحریک انصاف نے حلف نہ اٹھانے پر کلثوم نواز کے خلاف الیکشن کمیشن سے رجوع کرلیا ہے۔ ترجمان پی ٹی آئی فواد چوہدری کی جانب سے چیف الیکشن کمشنر سرداررضا خان کے نام تحریر خط میں لکھا گیا ہے کہ کلثوم نواز کی کامیابی اور نوٹیفیکیشن کے اجراء کے بعد سے اب تک تین بار قومی اسمبلی کا اجلاس ہوچکا تاہم کلثوم نواز نےعہدے کا حلف نہیں اٹھایا۔


آپ کی رائے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا